مقامی انتظامی ڈھانچہ

بنیادی حقوق کی ادائیگی کو بروقت یقینی بنانے کیلئےمقامی انتظامی ڈھانچے کو مضبوط کیا جائے۔ تاکہ مقامی سطح پہ ہی مسائل حل ہو سکیں۔

شہری سطح پہ ایک ہی کونسل ہو۔ یہ نہیں کہ شہر کو دو تین یا زیادہ کونسلوں میں تقسیم کردیا جائے۔ دیہی سطح پہ اس کو اس طرح سے ترتیب دیا جائے کہ کونسل کا مرکزی دفتر قریبی چھوٹے دیہات کے رہائشیوں کی پہنچ میں باآسانی ہو۔

 مقامی کونسل میں  انجینئر، علماء کونسل کے نمائندہ عالم، پٹواری، نادرا کے ملازم، بیت المال کے ملازم کے دفاتر کے علاوہ ڈاک کے محکمے کا بھی ایک فرد موجود ہو۔ صحت مند سرگرمیوں کی فراہمی کیلئے بھی انھی دفاتر کے ساتھ کھیل کود کے میدان ترتیب دئیے جاسکتے ہیں۔ علمی فروغ کیلئے ہر مقامی کونسل میں ایک لائبریری بنائی جائے۔ اسی لائبریری میں اہل علم تبادلہ خیال بھی کرسکیں۔

اہم عوامی شعبے مقامی کونسل میں ایک ہی جگہ ہوں۔ ان تمام اہلکاروں، دفاتر اور شعبوں کوایک ہی جگہ پہ اکٹھا کرنے سے سرکاری خزانے پہ بوجھ کم ہو جائے گا۔ یہ مقامات اور اہلکار عوام  کی پہنچ میں بھی آسانی سے  ہوں گے۔ اس طرح سے نچلی سطح پہ ہی مسائل کا حل بھی نکلے گا اور ترقی میں تیزی آئے گی۔ مقامی کونسل کیلئے بھی نمائندگان کے ذریعےعلاقے میں نظر رکھنا آسان ہوگی۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

error: Content is protected !!