جمہوریت، مولانا عصمت اللہ معاویہ کی نظر میں

 جمہوریت اور آمریت کے اس چوہے بلی کے کھیل میں عوام کو تماشہ بنادیا گیا۔ آخر کب تک ہم آمریت اور جمہوریت جیسے اسلام مخالف ظالم نظاموں میں گھن کی طرح پستے رہیں گے؟۔۔۔ اے لوگوں! کب تک اس ظالمانہ کافرانہ نظام کے تحت ہم در پردہ کفار کی غلامی کرتے رہیں گے۔ یہ ملک اسلام کے نام پر لیا گیا، اس کی مٹی کا مقدر اسلام ہے۔ ہماری تباہیوں اور بربادیوں اور تمام بیماریوں کا علاج بھی اسلام ہی ہے۔ جن جاگیرداروں نے سرمایہ اور جاگیروں کی وجہ سے ہم پر حکومت قائم کررکھی ہے۔ کیا یہ وہی لوگ نہیں ہیں جن کے آباء و اجداد انگریزوں کے وفادار تھے؟۔۔۔ کیا یہ وہی جاگیریں نہیں جو انگریز کی عطا کردہ ہیں؟۔۔۔ جس جمہوریت کے علم بردار ہیں، رب محمدﷺ کی قسم، وہ جمہوریت کفر ہے، ظلم ہے، رب سے بغاوت ہے۔ اس کا اسلام سے قطعاً کوئی تعلق نہیں۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

error: Content is protected !!